سمارٹ فونزکی شعاعیں اندھاکرسکتی ہیں،نئی تحقیق میں انکشاف

Muhammad Dastagir 16 Feb, 2021 سائنس وٹیکنالوجی

سمارٹ فونز سے خارج ہونے والی شعاعیں ہماری آنکھوں کو نقصان پہنچاتی ہیں لیکن حالیہ تحقیق میں انکشاف ہوا ہے کہ ان کی روشنی انسانی بینائی کے لیے توقعات سے زیادہ تباہ کن ہے۔امریکہ کی ٹولیڈو یونیورسٹی کی تحقیق میں اس بات کا انکشاف ہوا ہے کہ اسمارٹ فونز سے خارج ہونے والی یہ روشنی انسانی آنکھوں کے قرنیے میں جذب ہو کر ایسے زہریلے کیمیکل کی پیداوار میں مدد گار ثابت ہوتی ہے جو خلیات کو نقصان پہنچاتا ہے۔اس نقصان کے نتیجے میں بینائی میں بڑے بلائنڈ اسپاٹس بنتے ہیں جو پٹھوں میں تنزلی کی علامت ہوتے ہیں، یہ ایک ایسا مرض ہے جو اندھے پن کا خطرہ بڑھاتا ہے۔تحقیقی ٹیم کا کہنا ہے کہ اندھیرے میں ایسی ڈیوائسز کا استعمال ان شعاعوں کو مزید خطرناک بنا دیتا ہے۔عام طور پر 50 سال یا اس سے زائد عمر کے افراد اس تنزلی کا شکار ہوتے ہیں، ایسا اس وقت ہوتا ہے جب قرنیے کے مرکز کے قریب واقع ایک حصہ، جو نظر تیز رکھنے میں مدد دیتا ہے، کو نقصان پہنچتا ہے جس سے اندھے پن کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔اس کے شکار افراد کو دھندلے پن اور بلائنڈ اسپاٹس کی شکایت تواتر سے رہتی ہے اور وقت کے ساتھ یہ اسپاٹس بڑے ہونے لگتے ہیں جبکہ قرنیہ مرنے لگتا ہے۔