گنے کی پیداوار بڑھانے کیلئے کاشتکار نئی اقسام کاشت کریں،رحیم یارخان میں سیمینار

Muhammad Dastagir 25 Feb, 2021 علاقائی

رحیم یارخان (نعیم بشیر سے)پاکستان زرعی ملک ہے اور اِس کی معیشت کا اِنحصار زیادہ تر زراعت پر ہے‘ گذشتہ چند سالوں سے اہم فصلوں کی پیداوار میں کمی ریکارڈ کی گئی ہے جسکی وجوہات میں جدید پیداواری ٹیکنالوجی کا فقدان‘ موسمیاتی تبدیلی اور کھادوں کا غیر متوازن اِستعمال شامل ہے‘گناضلع رحیم یار خان کی ایک اہم نقد آور فصل ہے جو ساڑھے چار لاکھ سے زائدرقبہ پر کاشت کی جاتی ہے‘گنے کی فی ایکڑ اوسط پیداوار650 من ہے جس میں اِضافے کی کافی گنجائش ہے کیونکہ بہت سے ترقی پسند کاشتکار 1200 من سے زیادہ پیداوار حاصل کر رہے ہیں۔ گنے کی پیداوار میں کمی کی وجوہات میں پرانی اِقسام کی کاشت‘ کھادوں کا غیر متوازن استعمال اور روائتی طریقہ کاشت ہے‘گنے کی پیداوار بڑھانے کیلئے کاشتکار نئی اقسام جدید طریقے سے کاشت کریں اور کھادوں کی سفارش کردہ مقدار کا بروقت اِستعمال کریں۔ اِن خیالات کا اِظہار ریجنل منیجر ایف ایف سی رحیم یار خان ہارون عزیز نے فارم ایڈوائزری سنٹر رحیم یار خان کے زیر ِ ِ انتظام رحیم یار خان میں گنے کی منافع بخش کاشت کے موضوع پر منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔منیجر فارم ایڈوائزری سنٹر رحیم یار خان محمد زاہد عزیز نے کہا کہ فوجی فر ٹیلائزر کمپنی لمیٹڈ 1981 ء سے ملک بھر کے کاشتکاروں کو اپنے زرعی خدمات کے شعبے کے ذریعے جدید ٹیکنالوجی فراہم کر رہی ہے ایگزیکٹو مارکیٹنگ (ایگری سروسز) رحیم یارخان ملک رضوان فاروق نے کہاکہ مسلسل فصلوں کی کاشت سےپیداوارمیں کمی آرہی ہے۔