حکومت،کالعدم ٹی ایل پی میں مذاکرات کے دودورناکام،تیسراآج رات ہوگا

Muhammad Dastagir 19 Apr, 2021 عالمی

لاہور:وزیر داخلہ شیخ رشید احمد اور وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نور الحق قادری مذاکرات کے ابتدائی دو دور کی ناکامی کے بعد کالعدم تحریک لبیک پاکستان(ٹی ایل پی) کے کارکنوں سے مذاکرات کا تیسرا دور آج رات کریں گے۔ حکومت پنجاب اور کالعدم تنظیم کے کارکنوں کے درمیان بات چیت کا پہلا دور گزشتہ روز ہوا تھا جو بے نتیجہ ختم ہو گیا تھا جبکہ دوسرا راؤنڈر آج منعقد ہوا۔ وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کے مطابق کالعدم تحریک لبیک اور حکومت پنجاب کے درمیان مذاکرات کا دوسرا دور کچھ دیر پہلے اختتام پذیر ہوا جس میں گورنر پنجاب چوہدری سرور اور وزیر قانون راجہ بشارت نے حکومت کی نمائندگی کی۔ ان کا کہنا تھا کہ بات چیت کا تیسرا دور رات کو 10 بجے ہو گا جس میں وزیر داخلہ شیخ رشید اور وزیر مذہبی امور نور الحق قادری شریک ہوں گے۔ تحریک لبیک نے حکومت کے سامنے چار شرائط رکھی ہیں جس میں کہا گیا کہ فرانسیسی صدر ایمینوئل میکرون کی جانب سے گستاخانہ خاکوں کی حمایت کے بعد فرانسیسی سفیر کو ملک بدر کیا جائے۔ انہوں نے مزید مطالبات کیے کہ پارٹی کے امیر سعد رضوی کو رہا کیا جائے، پارٹی پر پابندی ختم کی جائے اور گرفتار کارکنوں کو رہا کرنے کے ساتھ ساتھ ان کے خلاف درج ایف آئی آر بھی ختم کی جائیں۔ اتوار کو پنجاب پولیس نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ شرپسند عناصر نے پولیس اسٹیشن پر حملہ کر کے ڈی ایس پی کو اغوا کر لیا جس کے بعد انہوں نے اپنے دفاع میں کارروائی کی۔ ان کا کہنا تھا کہ علی الصبح شرپسند عناصر نے نوان کوٹ پولیس اسٹیشن پر حملہ کیا جہاں رینجرز اور پولیس الکار اندر پھنس کر رہ گئے اور ٹی ایل کے صدر دفتر کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ ڈی ایس پی نوان کوٹ کو اغوا کر کے اپنے مرکز لے گئے۔دوسری جانب پولیس نے ڈی ایس پی کے اغوا، سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے، فائرنگ کے ذریعے خوف و ہراس پھیلانے اور پولیس اسٹیشن پر پیٹرول اور ایسڈ بم پھینکنے کے الزام میں ٹی ایل پی کے 23 کارکنوں کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے۔