تحریک لبیک کے دھرنے جاری،جھڑپوں میں سینکڑوں افراد زخمی،متعددجاں بحق

Muhammad Dastagir 14 Apr, 2021 عالمی

لاہور،کراچی،اسلام آباد:تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے سربراہ علامہ سعد حسین رضوی کی گرفتاری کے خلاف ملک کے مختلف شہروں میں شروع ہونے والا احتجاج تیسرے روز بھی جاری ہے جہاں مظاہرین نے ملک کی اہم شاہراہوں پر دھرنا دے رکھا ہے جس کی وجہ سے ملک میں آمد و رفت اور ٹریفک کی روانی متاثر ہوئی ہے۔ مختلف مقامات پر مظاہرین کی پولیس کے ساتھ جھڑپوں کے نتیجے میں اہلکاروں سمیت سینکڑوں افراد زخمی اور متعدد جاں بحق ہوچکے ہیں۔ لاہور میں چونگی امر سدھو ، بھٹہ چوک ، نیا شادباغ چوک، دروغا والا، یتیم خانہ چوک، کرول گھاٹی رنگ روڈ، اسکیم موڑ، سمن آباد موڑ، بابو صابو چوک اور ڈیوس روڈ سے مال روڈ جانے والی روڈ بند ہے۔ ٹی ایل پی کے مشتعل مظاہرین کے ایک گروہ، جو بظاہر ایک پولیس اہلکار کا پیچھا کر رہے تھے، نے لاہور جنرل ہسپتال کی ایمرجنسی پر دھاوا بول دیا۔ہسپتال ذرائع کے مطابق لاٹھیاں اور ڈنڈے لے کر مظاہرین نے ایمرجنسی کے دروازے کو توڑنے کی کوشش کی۔ لاہور پولیس کے ایک سینئر اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا کہ اب تک ٹی ایل پی کے 100 ورکرز کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔ جہلم میں پولیس نے مشترکہ آپریشن کے بعد جی ٹی دینا روڈ کو کلیئر کردیا اور ٹی ایل پی ورکرز کو گرفتار کرلیا۔ پولیس ترجمان نے بتایا کہ آنے جانے والی دونوں سڑک کو ٹریفک کے لیے کھول دیا گیا ہے اور حکام نے قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے والوں کو گرفتار بھی کیا ہے۔ کھاریاں میں پولیس نے ٹی ایل پی ورکرز کے خلاف سڑکیں بند کرنے اور ریاستی امور میں مداخلت کرنے کے پر دو الگ الگ مقدمات درج کیے۔ چونیاں میں پولیس عہدیداروں اور ٹی ایل پی ورکرز کے درمیان تصادم کے نتیجے میں ایک ڈی ایس پی اور ایک ایس ایچ او زخمی ہوگیا۔ ٹی ایل پی کے متعدد زخمی ورکرز کو بھی ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔